ایوب ٹیچنگ ہسپتال میں آکسیجن نہ ملنے کی وجہ سے بچی جاں بحق۔ورثاء پرعملے کا تشدد۔


ایبٹ آباد:ایوب ٹیچنگ ہسپتال میں آکسیجن نہ ملنے کی وجہ سے بچی جاں بحق۔احتجاج پر سیکورٹی گارڈوں کالواحقین پر ظالمانہ تشدد۔چیف جسٹس آف پاکستان اور وزیر اعظم سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔زرائع کے مطابق ککمنگ کے رہائشی خالد قریشی کی گیارہ ماہ کی بیٹی امان کو سانس کی بیماری تھی جسکو طبی امداد کے لیئے ایوب ٹیچنگ ہسپتال لایاگیا۔ جہاں ڈاکٹروں نے بچی کو سرجیکل وارڈ بی میں داخل کر لیا۔وہاں پر ڈاکٹر موجود نہ ہونے پر بچی کو آکسیجننہ مل سکی جس سے بچی کی کے لواحقین نے وہاں پر موجود نرس کو کہا کہ بچی کی طبیعتبہت خراب ہے زرا اسکو چیک کریں اور اسکو آکسیجندیں۔مگر کسی نے نے بھی ایک نہ سنی اور گیارہ ماہ کی بچی امان زندگی کی بازی ہار گئی۔جس پر بچی کے لواحقین نے احتجاج کرنا شروع کیا تو ہسپتال کے تمام سکیورٹی گارڈوں نے ان پر بدترین تشدد کرناشروع کر دیا۔جس پر جاں بحق ہونے والی بچی کے لواحقین نے چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار اور وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے لاکھوں روپے تنخواہ لینے والے ڈاکٹروں اور سکیورٹی گارڈوں کے خلاف سخت سے سخت کاروائی کریں۔


Comments

comments