ایوب میڈیکل کالج کی لیکچرار ڈاکٹرمہوش کھاریاں کے برن یونٹ میں جاں بحق۔ 


ایبٹ آباد:ایوب میڈیکل کالج کی لیکچرار ڈاکٹرمہوش ایک ہفتے بعد کھاریاں کے برن یونٹ میں جاں بحق۔ اس ضمن میں ذرائع نے صحافیوں کو بتایاکہ ایوب میڈیکل کالج کے اٹانومی ڈیپارٹمنٹ میں تعینات ڈاکٹر مہوش کو مرگی وغیرہ کے دورے پڑتے ہیں۔ پچیس اکتوبربروزجمعرات وہ اپنے دفتر میں موجود تھیں کہ ان کو مرگی کا دورہ پڑا۔ اوروہ کمرے میں موجود گیس کے ہیٹرپرگرگئیں۔ جس کی وجہ سے ان کے کپڑوں میں آگ لگ گئی۔ اور وہ ہیٹرسے اٹھ نہ سکیں۔ دھواں اٹھنے پر جب لوگ کمرے میں داخل ہوئے تو ڈاکٹر مہوش کا جسم اسی فیصدسے زائد جل چکا تھا۔ ڈاکٹر مہوش کو تشویشناک حالت میں ایوب ٹیچنگ ہسپتال کے برائے نام برن یونٹ میں منتقل کیاگیا۔ جہاں نہ تو کوئی پلاسٹک سرجن ہے اور نہ ہی برن یونٹ میں کوئی سرجیکل آئی سی یوہے۔ جس کی وجہ سے بذریعہ ہیلی کاپٹر ڈاکٹر مہوش کو کھاریاں کے برن یونٹ میں منتقل کیاگیا۔

جہاں ایک ہفتے تک موت و حیات کی کشمکش میں مبتلاء رہنے کے بعد ڈاکٹرمہوش موت کے منہ میں چلی گئیں۔ ذرائع کے مطابق ایبٹ آباد سمیت ہزارہ بھر کے اراکین اسمبلی کی نااہلی کی وجہ سے ہزارہ میں کوئی بھی برن یونٹ موجود نہیں ہے۔ جس کی وجہ سے آتشزدگی سے متاثرہ مریضوں کو اسلام آباد ، واہ یا کھاریاں کے برن یونٹ میں لے جایا جاتاہے اور زیادہ تر مریض طویل سفر برداشت نہیں کرسکتے اور موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔ گزشتہ دس روز کے دوران بلال ٹاؤن میں ہونیوالی آتشزدگی سے یاسر خان اور ان کی اہلیہ موت کے میں جاچکے ہیں۔ جبکہ اس وقت تک سینکڑوں لوگ برن یونٹ نہ ہونے کی وجہ سے یا تو موت کے میں میں چلے گئے ہیں یا معذوری کی زندگی گزار رہے ہیں۔


Comments

comments