سی پیک کے متاثرین پر پولیس کا لاٹھی چارج۔ 


ایبٹ آباد: سی پیک منصوبے میں متاثرین کو معاوضوں کی ادائیگی میں کرپشن ایبٹ آباد کی ضلعی انتظامیہ، محکمہ مال ، این ایچ اے اور سی اینڈ ڈبلیو کی ملی بھگت سے ٹھنڈا میرا کے متاثرین کو دو سے ڈھائی لاکھ روپے فی مرلہ معاوضہ دینے کے بجائے42 ہزار روپے معاوضہ کی ادائیگی پر متاثرین مشتعل ہو گئے ۔ ٹھنڈا میرا کے متاثرین کی ایک بڑی تعداد مرد، خواتین اور بچے سراپا احتجاج بن گئے جس پر ایبٹ آباد پولیس نے احتجاج کرنیوالے پانچ افراد کو گرفتار کر لیا جبکہ لیڈیز پولیس نے بچوں اور خواتین کو تشدد کا نشانہ بنایا۔

واقعات کے مطابق سی پیک منصوبہ کی زد میں آنیوالے اراضی مالکان کو معاوضوں کی ادائیگی میں بڑے پیمانے پر گھپلوں کا انکشاف ہوا ہے ۔ ایبٹ آباد کی ضلعی انتظامیہ اور محکمہ مال کی ملی بھگت سے ڈھائی لاکھ روپے مرلہ مالیت کی اراضی کا ریٹ صرف42 ہزار روپے فی مرلہ لگا کر کروڑوں روپے ہڑپ کرنے کا انکشاف ہوا ہے جبکہ متاثرین کو ادائیگیوں میں بھی بڑے پیمانے پر کرپشن کی گئی ہے ۔ متاثرین اراضی کا کہنا ہے کہ محکمہ مال ایبٹ آباد کی کرپشن کی وجہ سے انہیں جائز حقوق سے محروم رکھ کر ان کا استحصال کیاجا رہا ہے ۔

متاثرین نے چیف جسٹس سپریم کورٹ ثاقب نثار، چیف آف آرمی سٹاف قمر جاوید باجوہ اور وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے اپیل کی ہے کہ انہیں انصاف فراہم کیاجائے ورنہ قیامت کے دن ان ذمہ دارظالموں کا گریبان اور ہمارا ہاتھ ہوگاکیو نکہ یہ نا انصافی کسی صورت برداشت نہیں کریں گے ۔ متاثرین نے کہا کہ سی پیک منصوبہ کی مخالفت نہیں کر رہے بلکہ ہم اس کی حمایت کرتے ہیں لیکن ضلعی انتظامیہ کی جانب سے جو ناروا اور امتیازی سلوک کیاجا رہا ہے اسے برداشت نہیں کریں گے ۔


Comments

comments