ماہانہ سات لاکھ پگھار۔ کارکردگی صفر۔


ایبٹ آباد: پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت خیبر پختونخواہ نے سپریم کورٹ آف پاکستان کے احکامات کی دھجیاں بکھیر کر رکھ دی انصاف اور میٹ کا واویلا کرنے والوں نے اپنے من پسند افراد کو نوازنے کی پالیسی اختیار کرتے ہوئے ایبٹ آباد میں قائم ہونے والے نئے محکمہ واسا کے سی او نور قاسم کی ماہانہ تنخواہ پورے ہزارہ ریجن کے افسران سے زائد 7 لاکھ مقرر کر دی گئی سالانہ 84لاکھ روپے تنخواہ وصول کرنے والے سی او کی کارکردگی شہر میں جا بجا فلتھ ڈپو اور پانی کے پیاسے عوام کا منہ چڑا رہی ہے جبکہ دوسری جانب چیف جسٹس ثاقب نثار کے نوٹس پر ایوب ٹیچنگ ہسپتال سے فارغ کئے جانے والے افراد کو دوبارہ بورڈ آف گورنر کے ممبران نامزد کر دیئے گئے ۔

واسا چیئرمن بورڈ آف گورنر ممبران ماہانہ 7 لاکھ تنخواہ وصول کرنے والے بادشاہ سلامت کی بے قاعدگیوں غفلت اور لوٹ مار پر خاموش تماشائی بن کر عوام کی بے بسی اور حکومتی خزانے کے ضیاع پر چپ کا روزہ رکھ لیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے حکم جاری کر رکھا ہے کسی بھی سرکاری آفیسر کی ماہانہ تنخواہ تین لاکھ سے زائد نہیں ہونی چاہیے اور مکمل رپورٹ بھی طلب کر رکھی ہے لیکن اس کے برعکس ایبٹ آباد میں واسا کے سی او نور قاسم کو نوازنے کیلئے سالانہ 84 لاکھ پر تعینات کر دیا گیا ہے جن کی ذمہ داری صرف 10 یونین کونسل میں پانی کی فراہمی اور صفائی کرنا مقصود ہے جبکہ ان کے ساتھ سی ایف او اڑھائی لاکھ اور عملہ کی بڑی تعداد موجود ہونے کے باوجود کروڑوں روپے مالیت کی گاڑیاں و دیگر سہولتیں موجود ہیں لیکن اس کے برعکس شہری یونین کونسلوں و ملحقہ کونسلوں میں ہر طرف گندگی کے ڈھیر دکھائی دیتے ہیں جبکہ والدین ہفتہ ہفتہ علاقوں میں پانی کی ترسیل نہیں کررہے ہیں اور جب تک پانی کے ستائے شہری احتجاج نہ کریں تب تک پانی کی فراہمی ممکن نہیں بنائی جاتی ہے عمائدین علاقہ سنجیدہ شہریوں نے سپریم کورٹ آف پاکستان سے فوراً نوٹس لینے چیئرمین بورڈ آف گورنر ممبران سے ریکوری کرنے کا مطالبہ کیا ہے جبکہ دوری جانب ایوب ٹیچنگ ہسپتال سے سپریم کورٹ کے حکم پر فارغ کئے جانے والے افراد کی دوبارہ ممبران نامزدگی پر بھی حیرت کا اظہار کیا گیا ہے اور کہا کہ پی ٹی آئی حکومت مسلم لیگ ن پی پی پی کے نقش قدم پر چل پڑی ہے جو نوجوانوں کے ارمانوں کا سیاسی قتل ہو رہا ہے حکومت کے ہوش کے ناخن لے جس عوام نے پی ٹی آئی کو اقتدار کے ایوانوں تک پہنچایا اگر یہی پالیسیاں رہی تو عوام عمران خان کیخلاف سڑکوں پر آ جائیں گے ۔


Comments

comments