مشتاق غنی، قلندرلودھی، اکبرایوب سمیت 33اراکین اسمبلی کروڑوں کے نادہندہ نکلے۔


ایبٹ آباد:سابق صوبائی وزراء سمیت 33 اراکین اسمبلی خیبرپختونخواہ سرکار کے مقروض نکلے۔ سرکاری رہائشگاہوں سمیت مختلف مدوں میں کروڑوں کے بقایادار ہیں۔ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے مقروض امیدواروں کے کاغذات نامزدگی نانچ پڑتال کے دوران اس وقت تک منظور کرنے سے روک دیئے جب تک ان کی ادائیگیاں نہیں کی جاتیں۔ خیبرپختونخواہ نگران حکومت نے ایبٹ آباد کے سابق اراکین اسمبلی سمیت صوبے بھر کے دیگر ارکان اسمبلی کے بقایاجات کی فہرست الیکشن کمیشن کو بھیج دی ہے۔ جس پر الیکشن کمیشن آف پاکستان نے صوبے کے دیگر ریجنز کی طرح ہزارہ کے سابق اراکین اسمبلی کے کاغذات نامزدگی جانچ پڑتال کے دوران روک لئے ہیں۔ اور مذکورہ ادائیگی کے بعد ہی ان کے کاغذات نامزدگی کو منظور کیا جائے گا۔ ان میں سابق صوبائی وزیر ہائرایجوکیشن مشتاق غنی، سابق صوبائی وزیر خوراک قلندر خان لودھی، وزیراعلیٰ کے مشیر اکبر ایوب خان، ایم پی اے نرگس بی بی، وزیراعلیٰ کے مشیر عبدالحق، سابق صوبائی وزیر یوسف ایوب خان، سابق وزیر مظفر سید، سابق وزیر امتیاز شاہد، سابق صوبائی وزیر شہرام ترکئی، سابق صوبائی وزیر حبیب الرحمن تنولی، پارلیمانی سیکرٹری نرگس بی بی، پارلیمانی سیکرٹری وینا ناز، پارلیمانی سیکرٹری بی بی فوزیہ، پارلیمانی سیکرٹری نادیہ شبیراور دیگر شامل ہیں۔

نادہندگان میں سے جولوگ الیکشن میں حصہ لینے جارہے ہیں۔ ان کے کاغذات جانچ پڑتال کے دوران صوبائی حکومت کی درخواست پر الیکشن کمیشن نے روک دیئے ہیں اور انہیں ہدایت کی ہے کہ جب تک وہ اپنے بقایاجات ادا نہیں کرتے ان کے کاغذات منظور نہ کئے جائیں۔


Comments

comments