نجی تعلیمی اداروں کی فیسوں میں کمی نہ ہوسکی۔ شہری سراپااحتجاج۔


ایبٹ آباد:نجی تعلیمی اداروں کی جانب سے فیسوں میں کمی کے بعد دوبارہ اضافہ کردیاگیا۔ والدین اورشہری سراپا احتجاج۔ ایبٹ آباد میں پرائیویٹ اسکولز ریگولیٹری اتھارٹی کا دفترفوری طور پر کھولنے کا مطالبہ۔ اس ضمن میں ایبٹ آباد کے شہریوں نے صحافیوں کو بتایاکہ پاکستان انٹرنیشنل پبلک اسکول سمیت چند گنے چنے نجی اسکولوں نے خیبرپختونخواہ حکومت کی جانب سے بنائی جانیوالی پرائیویٹ اسکولز ریگولیٹری اتھارٹی کے احکامات کی روشنی میں صرف بااثر افراد کے بچوں کی فیسوں میں کمی کی۔ ان سے جولائی کی ٹیوشن فیسیں بھی نہیں لی گئیں۔ جبکہ ایبٹ آباد کے دیگر تمام نجی تعلیمی ادارے پرائیویٹ اسکولز ریگولیٹری اتھارٹی کے احکامات کی خلاف ورزی کرتے ہوئے نہ صرف پوری فیسیں لیتے رہے۔ بلکہ ایک سے زائد حقیقی بہن بھائیوں سے بھی پوری فیسیں وصول کرتے چلے آرہے ہیں۔

اس حوالے سے جب ایبٹ آباد کے مختلف نجی اسکولوں کے مالکان سے پوچھاگیا تو ان کا کہناتھاکہ نجی اسکولوں کی تنظیم (پرائیویٹ ایجوکیشنل نیٹ ورک) کے احکامات کی روشنی میں ہم پوری فیسیں وصول کررہے ہیں۔ کیونکہ تنظیم کی جانب سے ہمیں یہ کہاگیاہے کہ کسی سے بھی کم فیس وصول نہیں کرنی ہے۔ پرائیویٹ اسکولز ریگولیٹری اتھارٹی کے حکم کو عدالت کی جانب سے معطل کردیاگیاہے۔ جب مختلف اسکولوں کے مالکان سے عدالتی حکم کی کاپی کے بارے میں استفسار کیاگیا تو ان کے پاس عدالتی فیصلے کی کوئی کاپی نہیں تھی۔ ایبٹ آباد کے شہریوں نے خیبرپختونخواہ حکومت سے مطالبہ کیاہے کہ ایبٹ آباد میں فوری طور پر پرائیویٹ اسکولز ریگولیٹری اتھارٹی کا دفتر قائم کیاجائے۔ اورزائد فیسیں وصول کرنے والے تعلیمی اداروں کیخلاف سخت کارروائی کی جائے۔


Comments

comments