وسیم عباسی کی گرفتاری میں مسلم لیگ(ن) کے قائدین کا ہاتھ نکلا۔ 


ایبٹ آباد:پی ٹی آئی کے سینئرنائب صدر وسیم عباسی کی گرفتاری میں مسلم لیگ(ن) کے قائدین کا ہاتھ نکلا۔ ضمانت پر رہائی مل گئی۔ اس ضمن میں پاکستان تحریک انصاف ضلع ایبٹ آباد کے سینئر نائب صدر وسیم عباسی جوکہ ویلج کونسل دروازہ کے ناظم اورانجمن تاجران ایوبیہ کے صدر بھی ہیں۔ وسیم عباسی کے خلاف محکمہ جنگلات نے سرکاری اراضی پر قبضہ کرنے اور مکان تعمیر کرنے پر زیر دفعہ85/44 کے تحت ایف آئی آر درج کروارکھی تھی۔ عبوری ضمانت منسوخ ہونے پر گرفتاری کے بعد وسیم عباسی کو جیل بھجوا دیاگیاتھا۔ بدھ کے روز وسیم عباسی کو عدالت نے ضمانت پر رہا کرنے کا حکم جاری کردیا۔

رہائی کے بعد میڈیا کے نمائندوں کو وسیم عباسی نے بتایاکہ مسلم لیگ(ن) کے رہنماء سردار مہتاب کے بھائی سابق ایم این اے سردار فدااورایم پی اے سردار فرید نے علاقے میں ایک جگہ پرقبضہ کرکے وہاں قیمتی درخت کٹوا دیئے تھے۔میں نے اس غیرقانونی کارروائی پر ان لوگوں کو روکاتھا۔ جس کے جواب میں ان لوگوں نے انتقامی کارروائی کرتے ہوئے سیکرٹری جنگلات خیبرپختونخواہ اور ڈی ایف او پر دباؤ ڈال کر میرے خلاف ایک رپورٹ درج کروائی۔ جس جگہ پر میرے اوپرالزام لگایاگیا وہ میری ذاتی ملکیتی جگہ ہے۔ میرے خلاف انتقام کی وجہ صرف یہ ہے کہ میں نے ان لوگوں کیخلاف آواز اٹھائی اور مسلم لیگ(ن) کو خیر آباد کہنے کے بعد پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی۔ ان لوگوں نے محکمہ جنگلات کے نچلے طبقے کے چند اہلکاروں کی ملی بھگت سے میرے خلاف انتقامی کارروائی کروائی۔ ایک سال تک اس رپورٹ کو چھپا کر رکھا گیا مجھے نہیں بتایاگیا۔ ایک سال تک اس کارروائی کومخفی رکھنے کی وجہ یہ تھی کہ یہ لوگ سرکاری کارروائی کی آڑ میں مجھے ویلج کونسل کی نظامت سے نااہل کروانا چاہتے تھے۔ عدالت نے میرا موقف تسلیم کیا اور فوری طور پر میری رہائی کے احکامات جاری کردیئے۔ وسیم عباسی نے اعلان کیاکہ میں محکمہ جنگلات کے علاوہ ان سیاسی بونوں کیخلاف ہتک عزت کا دعویٰ بھی دائر کرونگا اوران کیخلاف قانونی کارروائی بھی کی جائے گی۔


Comments

comments