چھ سالہ بچے کیساتھ جنسی زیادتی۔ پولیس اور ڈاکٹربااثرافراد کے سامنے بے بس ہوگئے۔ والدہ صحافیوں کے پاس پہنچ گئی۔


ایبٹ آباد:چھ سالہ بچے کیساتھ نویں جماعت کے طالبعلم کی جنسی زیادتی۔ بااثرافراد کی ایماء پر پولیس اور ڈاکٹروں نے میڈیکل رپورٹ میں ردوبدل کرکے ملزم کی پشت پناہی کردی۔ متاثرہ بچے کی والدہ اور چچا بچے کو لیکر صحافیوں کے پاس پہنچ آئے اس ضمن میں ذرائع نے بتایا ہے کہ تھانہ ڈونگا گلی کی حدود تیال نگری بالا کے رہائشی محمد صابر کے چھ سالہ بچے کو اس کے پڑوسی نویں جماعت کے طالبعلم محمد اقبال نے ویرانے میں لے جاکر جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔اور موقع سے فرار ہوگیا۔محمد اقبال گورنمنٹ ہائی اسکول سمندر کٹھہ کا طالبعلم بتایاجاتاہے۔
چھ سالہ بچے سائم نے اپنے ساتھ ہونے والی زیادتی کا سارا واقعہ اپنی والدہ کوگھر آکر بتادیا جس پر والدہ اپنے بیٹے کو لیکر مقامی تھانہ ڈونگا گلی کی پولیس چوکی بالا گلی جا پہنچی جس پر پولیس چوکی کے انچارج نے فوری طور پر ڈی ایس پی اور ایس ایچ او کو سارے واقعہ سے آگاہ کیا اور بچے کی والدہ کی اطلاعی رپورٹ درج کر کے میڈیکل کے لےئے موچی ڈھاراہسپتال روانہ کیا ۔

جہاں پر مقامی ڈاکٹر نے میڈیکل کرکے اپنے افسران کو تما م تفصیلات سے آگاہ کیا جس پر ڈی ایچ کیو کے ایم ایس نے ڈی ایچ کیو میں بلا لیا،اس دوران بااثر افراد ڈی ایچ کیو اہسپتال پہنچ گئے اورپولیس اور ڈاکٹر کے ساتھ ملکر میڈیکل رپورٹ کا جائزہ لیا جس میں بچے کے ساتھ ہونے والی زیادتی کی تصدیق ہوئی۔ جس کے بعد بچے کو واپس پولیس چوکی بالا گلی لے گئے ۔جہاں ڈی ایس پی گلیات نے بچے اور اس کی ماں کو زبردستی گاڑی میں بیٹھا اور موچی ڈھارا لے گئے ۔وہاں اس کا دوبارہ میڈیکل کر کے رپورٹ مختلف کرلی۔

جس پر ایس ایچ او نے ملزم کے خلاف ایف آئی آر زیر دفعہ 377ْْْْْْْْْْْْْْْ،511کے تحت مقدمہ درج کرکے ملزم کو کال کرکے بتایا کہ تم عدالت سے ضمانت قبل گرفتاری کروا لو۔انصاف نہ ملنے پر بچے کی والدہ اور چچا بچے کو لیکر ڈی پی او ایبٹ آباد کے پاس پہنچ گئے جہاں ڈی پی او ایبٹ آباد نے سرخ جھنڈی دکھا دی۔جس کے بعد بچے کی والدہ میڈیا کے پاس پہنچ گئی

میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ انصاف کی حکومت میں انصاف ملنا بھی مشکل ہوگیا والدہ کا کہنا تھا کہ میرے بیٹے کے ساتھ زیادتی دو روز قبل ہوئی ہے جبکہ میرے بیٹے کو میڈیکل رپورٹ ایک ہفتہ پہلے کی بناکردی گئی جس پر متاثرہ بچے کی والدہ نے آئی جی کے پی کے سے انصاف فراہم کرنے کا مطالبہ کردیا۔

واضح رہے کہ اس سے قبل پہلے بھی بااثرافراد کی ملی بھگت سے گلیات کے ایسے کیسوں میں غریب افراد کو انصاف نہ مل سکا۔اس دوران گلیات کی عوام نے میڈیا کو بتایا کہ ہم عمران خان اور صوبائی وزیر صحت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ گلیات میں سرزد ہونے جنسی زیادتی کے واقعایات کی میڈیکل چیک اپ ایبٹ آباد ڈی ایچ کیو اہسپتال میں کیا جائے۔کیوں کہ گلیات کی اہسپتال میں ناتجربہ کار ڈاکٹروں کی وجہ سے عوام کو انصاف نہیں مل سکتا۔

gif

gif


Comments

comments