ڈپٹی کمشنر کے دفتر میں چیڑھ کے تین قیمتی درخت کاٹ دیئے گئے۔ 


ایبٹ آباد:چراغ تلے اندھیرا۔ ڈپٹی کمشنر کے دفتر میں چیڑھ کے تین قیمتی درخت کاٹ دیئے گئے۔ اس ضمن میں ذرائع نے صحافیوں کو بتایاکہ ڈپٹی کمشنر ایبٹ آباد نے اپنے ہی احکامات کو روند دیا۔ ڈپٹی کمشنر نے دفعہ 144 کے تحت پورے ضلع میں درختوں اور پہاڑوں کی کٹائی پر پابندی عائد کررکھی ہے۔ تاہم اس کے باوجود پورے ایبٹ آباد میں نہ صرف قیمتی درختوں بلکہ پہاڑوں کی کٹائی بھی زور و شور سے جاری ہے۔ اور ڈپٹی کمشنر کے دفتر کے اہلکار چائنہ کٹنگ مافیا سے بھتہ لیکر انہیں اجازت دیئے ہوئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق چیڑھ کے قیمتی درخت ڈپٹی کمشنر کے دفتر میں لگے ہوئے ہیں۔ اور یہ تمام درخت صحت مند تھے۔ ذرائع کے مطابق ڈپٹی کمشنر کے دفترمیں چیڑھ کے تین قیمتی قد آور درختوں کو منٹوں میں گاجر مولی کی طرح کاٹ کر فروخت کردیاگیا۔

چیڑھ کے قیمتی درختوں کی کٹائی پرڈپٹی کمشنر کے دفتر کے اہلکار بھی آپس میں جھگڑپڑے۔ شہریوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیاہے کہ چیڑھ کے تین قیمتی درخت کاٹنے پر ڈپٹی کمشنر کو ان کے عہدے سے معطل کرکے انہیں سخت سے سخت سزا دی جائے۔


Comments

comments