ہمارا فیس بک پیج

ایبٹ آباد کی ضلعی انتظامیہ کے افسران سینکڑوں دوکانیں سیل کرکے غائب۔ پیرکوبھی چھٹی۔ بھاری جرمانوں کی آڑ میں لوگوں کا کچومر نکال دیا۔

ایبٹ آباد(وائس آف ہزارہ) ایبٹ آباد کی ضلعی انتظامیہ کے افسران سینکڑوں دوکانیں سیل کرکے غائب۔ پیرکوبھی چھٹی۔ بھاری جرمانوں کی آڑ میں لوگوں کا کچومر نکال دیا۔ اس ضمن میں ذرائع نے وائس آف ہزارہ کو بتایاکہ اسسٹنٹ کمشنروں نے ایبٹ آباد شہر، فوارہ چوک، مری روڈ، سپلائی، منڈیاں کے علاقوں میں ہفتہ کے روز سینکڑوں دوکانوں کو ایس اوپیز کی خلاف ورزی پر سیل کردیا۔ ہفتہ اتوارچھٹی کے باعث تاجر اپنی دوکانیں ڈی سیل نہ کرواسکے۔ جبکہ پیر کے روز بھی چھ ستمبر کی چھٹی کی وجہ سے تمام دفاتر بند ہیں اور تاجروں نے اپنے بچوں کیلئے روزی روٹی پیداکرنی ہے۔ دفاتربند ہونے اور کوئی بھی ذمہ دار آفیسر موجود نہ ہونے کی وجہ سے ایبٹ آباد میں سینکڑوں تاجروں کی دوکانیں سیل ہیں۔ اگر تاجر اپنی دوکان کو کھولتے ہیں تو ان پر پچیس پچیس ہزار روپے بھاری جرمانہ عائد کردیا جاتاہے۔ اس جرمانے کا تیس فیصد حصہ دوکان سیل کرنے والے اسسٹنٹ کمشنر کو مل جاتاہے۔ ایک طرف تاجروں کی دوکانیں سیل ہیں اور دوسری طرف ان کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے پڑے ہوئے ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کے افسران کو تو بھاری تنخواہیں اور مراعات مل جاتی ہیں۔ لیکن غریب دوکانداروں کے پاس کچھ بھی نہیں ہے۔ ان کی دوکان چلے گی تو ان کے گھر کے چولہے چلیں گے۔ جبکہ دوسری جانب ایبٹ آباد میں دو تاجر یونین موجود ہیں۔ جنہوں نے اس مسئلہ پر مکمل خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

شیئر کریں

Share on facebook
Facebook
Share on twitter
Twitter
Share on whatsapp
WhatsApp
Share on print
Print

اہم خبریں

error: Content is protected !!